انضمام الحق کو پاکستانی بیٹنگ دیکھ کر ہنسی کیوں آگئی،دلچسپ انکشافات

رپورٹ: عمران عثمانی

پاک زمبابوے ٹیسٹ میچ پر سابق کرکٹرز ایسے ہی تبصرے کر رہے ہیں کہ جیسے دنیا کی 2 بہترین ٹیموں کے مابین مقابلہ ہو،جمعہ کے کھیل کے دوسرے روز پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان نے توقعات سے کم اسکور کیا،پاکستان کا میچ دیکھتے ہوئے مجھے ہنسی آگئی،بیٹسمینوں کے انداز سے لگا کہ اتنے محتاط تھے کہ جیسے اسکور کرنے اور لمبی اننگ کھیلنے سے بڑے ہیرو بن جائیں گے.

پاکستان نے زمبابوے کے خلاف جو کیا،بہتر ہے آئندہ ایسا نہ کرے،شعیب اختر کی سخت وارننگ

انضمام الحق نے اپنے یوٹیوب چینل پر تبصرے میں کہا ہے کہ 120 اوورز میں 3کی اوسط سے اسکور کرنا زیادتی ہے،مقابلہ میں دنیا کا کمزور ترین بائولنگ اٹیک تھا لیکن بیٹسمین آئوٹ ہونے کے ڈر سے اور ہیرو بننے کے شوق میں بالیں ضائع کرگئے اور مواقع گنوادیئے ہیں.میرے خیال میں یہ گریٹ پرفارمنس نہیں ہے،عمران بٹ پر پریشر ہونا چاہئے تھا،اس کا اسٹرئیک ریٹ 40 کا ہے تو یہ ریٹ بڑا خطرناک ہے،اس سے کبھی نہیں سیکھا،عابد کا بھی اسٹرائیک ریٹ ففٹی سے نیچے تھا،پاکستان نے اپنے اوپر پریشرلے کر میچ بے مزا کردیا،اسی طرح رضوان نے 106 بالز پر 45کئے،اس کی فارم تھی،اتنی بالز پر 70اسکور کرتے،بابر اعظم پہلی بال پر آئوٹ ہوگئے.

بابر اعظم کا صفر،فواد عالم کی پھر سنچری،پاکستان کو 198 رنزکی سبقت،4وکٹیں باقی

انضمام کہتے ہیں کہ فواد عالم نے اس کو اپنے اوپر سوار نہیں کیا اور 70کے اسٹرائیک ریٹ سے کمال بیٹنگ کی،فواد عالم کی کمال بات ہے،میں توقع کررہا تھا کہ اوپر سے کوئی ڈبل سنچری کرے گا،کوئی تگڑا 100کرے گا لیکن اس ٹیم کے خلاف نہیں کرسکے.فواد عالم کی یہ 10 ویں میچ میں چوتھی سنچری تھی.فواد جب ایک مرتبہ سیٹ ہوجائے تو 100 سے کم نہیں کرتا،اس کی 4سنچریز ہوگئی ہیں لیکن ایک ففٹی بھی نہیں ہے،یہ شاید ڈبل سنچری کا سوچ رہا ہوگا.فہیم اشرف کو اسکور کرنا چاہئے تھا لیکن ناکام گئے،حسن علی ہمیشہ موقع پر آکر اسکور کرتا ہے،یہ ایک اچھی بات ہے.جہاں ٹیم کو ضرورت پڑتی ہے،یہ اسکور بھی کرتا ہے،یہ پاکستان کرکٹ کے لئے اچھا سائن ہے.انضمام نے بھی شعیب اختر کی طرح پاکستان کے ایک اننگ کھیلنے کی بات کی ہے.

کرک سین نے دونوں سابق کرکٹرز کے تبصرے پیش کئے،دونوں نے ایک ہی بات مشترکہ کی ہے کہ پاکستانی بیٹنگ لائن ڈری ہوئی،سہمی ہوئی تھی اور یہ دفاعی کھیل کی علامت ہے.دونوں کا یہ اٹیک اصل میں ہیڈ کوچ مصباح الحق کے اوپر ہے جو اپنے زمانہ میں ایسی ہی کرکٹ کھیلا کرتے تھے ،اب دیکھیں کہ مصباح ان کی بات سنتے ہیں یا ہمیشہ کی طرح سنی ان سنی کرتے ہیں.پاکستان کو اگر دوسری اننگ کھیلنی پڑگئی تو مصباح پر سخت تنقید آئے گی.