عمر گل کا یوم پیدائش، سنچورین میں ہی بنایا گیا ان کا ایک ریکارڈ آج قومی بائولرزکے لئے بڑا چیلنج

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق اسٹار فاسٹ بائولر اور ابتدائی 2ورلڈ ٹی 20کے ٹاپ وکٹ ٹیکر عمر گل کا یوم پیدائش آج ہے.عمر گل 14اپریل 1984 کو پیدا ہوئے،پاکستان کے لئے بے شمار خدمات سرانجام دیں،چند ماہ قبل گزشتہ سال کے آخر میں قومی ٹی20کپ کے بعد ہر قسم کی کرکٹ سے ریٹائر ہوگئے.

عمر گل نے 2003میں بنگلہ دیش کے خلاف ٹیسٹ ڈیبیو کیا،بعد میں وہ پاکستان کے لئے لازم و ملزوم ہوگئے،تینوں قسم کے فارمیٹ کی اہم ضرورت بنے رہے.آخری ٹیسٹ 2013میں کیپ ٹائون میں کھیلے.47میچز میں انہوں نے 163وکٹیں لیں.2016میں وہ پاکستان کے لئے آخری بار ون ڈے اور ٹی 20میچ کھیلے.

تیسرا ٹی 20 آج، جنوبی افریقا 2 سال سے سیریز جیتنے میں ناکام،پاکستان 2018 سے محروم مگر کیسے،میچ کس کا

130ایک روزہ میچز میں 179وکٹیں اور 42رنزکے عوض 6 شکار،اسی طرح 60 ٹی 20انٹر نیشنل میچزمیں 85وکٹیں اور 6رنزکے عوض 5کھلاڑی آئوٹ کرنا آج بھی ورلڈ ٹی 20اور پاکستان کرکٹ اور انٹر نیشنل کرکٹ کےٹاپ ریکارڈز میں ہے.

عمر گل نے ٹی 20انٹر نیشنل میں 5رنزکے عوض 6وکٹ لینے کا کارنامہ 2بار انجام دیا.پہلی بار ورلڈ ٹی 20 کے 2009کے ایڈیشن میں نیوزی لینڈ کے خلاف اوول اور دوسری بار 3مارچ 2013کو جنوبی افریقا میں جنوبی افریقا کے خلاف یہ کارکردگی دہرائی.اتفاق سے مقام سنچورین کا تھا جہاں آج قومی ٹیم ایک بار پھر ایکشن میں ہے،یہ پاکستان کی ٹاپ بہترین انفرادی بائولنگ بھی ہے جو آج سنچورین میں موجودہ بائولرز کے لئے ایک چیلنج ہے.

عمر گل 14اپریل 2021کو اپنی 37ویں سالگرہ منارہے ہیں.2016 میں جب وہ پاکستانی ٹیم سے نکالے گئے تو ان کی عمر صرف 32 سال تھی،انضمام الحق کے چیف سلیکٹر بننے کے بعد ان پرقومی کرکٹ کے دروازے بند ہوگئے تھے اور وہ اس پر متعدد بار بولے بھی تھے لیکن کیا ہے کہ پشاور سے تعلق رکھنے والے عمر گل کی پھر واپسی نہیں ہوسکی.

پاکستان کے دائیں ہاتھ کے پیسر عمر گل 2007 اور 2009 کے شروع کے 2 ورلڈ ٹی 20 کے ٹاپ وکٹ ٹیکر بائولر بنے،اس کے نتیجہ میں قومی ٹیم نے دونوں فائنل کھیلے لیکن 2009کی ٹرافی بھی جیت لی،اسی ایونٹ میں انہوں نے نیوزی لینڈکے خلاف ایسا خوفناک اسپیل کیا تھا کہ 6رنز دے کر ان کے 5کھلاڑی شکار کرلئے،اس وقت نمبر ورلڈ ریکارڈ تھا جو اس وقت تیسرے نمبر کا ہے.وہ آئی سی سی کی ٹی 20 آل ٹائم پلیئرز رینکنگ میں بائولنگ کے باب میں اب بھی نمبر ون بائولر ہیبں،اس کی وجہ یہ ہے کہ ان کی کفایتی بائولنگ اور پھر اس پر بننے والے ریکارڈز نےا نہیں یہ ممتاز مقام عطا کیا ہے.