تیسرا ٹی 20 آج، جنوبی افریقا 2 سال سے سیریز جیتنے میں ناکام،پاکستان 2018 سے محروم مگر کیسے،میچ کس کا

رپورٹ : عمران عثمانی

پاکستان کرکٹ ٹیم کے لئے اہم ترین لمحہ آن پہنچا،جنوبی افریقا کے خلاف 4ٹی 20میچزکی سیریز کا تیسرا مگر اہم ترین میچ آج سنچورین میں کھیلا جائے گا،پاکستانی وقت کے مطابق جس وقت یہ میچ شروع ہوگا تو ملک بھر میں پہلے روزے کی افطاری کی تیاریاں ہونگی لیکن کرکٹرز کا میچ تراویح تاک جاری رہے گا.

دوسرا میچ ہارنے کے بعد قومی ٹیم سیریز 1-1سے برابر کرواگئی ہے،میزبان ٹیم کا اعتماد لوٹ آیا ہے،اس لئے کانٹے کا مقابلہ متوقع ہے.پاکستان کرکٹ ٹیم میں اب کسی تبدیلی کے چانسز کم ہی ہونگے،ٹیم ایک بار پھر ایسی کمبی نیشن کے ساتھ میدان میں اترے گی،پروٹیز ٹیم میں ایک تبدیلی ڈیئر ڈوسین کی فٹنس اور واپسی سے مشروط ہے.دوسری صورت میں پہلے 2میچزکھیلنے والی سائیڈ ہی میدان میں اترے گی.

محکمہ موسمیات کے مطابق گرمی خوب ہوگی اور میچ خراب ہونے کے کوئی امکانات نہیں ہیں.یہ جوہانسبرگ نہیں بلکہ سنچورین کا میدان ہے،اس کے حوالہ سے کرک سین الگ سے ایک رپورٹ پیش کرچکا ہے،تفصیل کے لئے نیچے دیئے گئے لنک پر کلک کریں.

تیسرا ٹی 20،سنچورین پاکستان کے لئے 2 اعتبار سے منفرد،محمد حفیظ کے لئے خوش قسمت

سنچورین کی پچ قدرے سلو ہے یہاں اسپنرز کومدد مل سکتی ہے،سوال یہ ہے کہ ٹاس جیتنے والی ٹیم کو پہلے کیا کرنا چاہئے تو سیدھا سا فارمولہ ہے کہ پچ کی کنڈیشن چیک کرکے درست فیصلہ کی سمجھ ہونی چاہئے،بعض نئی پچز ماحول،و کنڈیشنز کے ساتھ مشروط ہوتی ہیں ،پھر نئی پچ کے ابتدائی 10اوورز کافائدہ اٹھانے کے لئے عقل بھی درکار ہوتی ہے اور وہ پاکستانی کپتان و بائولرز بھول جاتے ہیں،اس لئے ذرا دھیان سے جانا ہوگا.

پاکستانی ٹیم کے لئے یہ سیریز جیتنی نہایت ہی ضروری ہے کیونکہ حریف ٹیم اپنے سینئرز سے محروم ہے اور ایسے میں ایک شکست بھی بھاری پڑے گی کیونکہ شکست کا مطلب ہوگا کہ سیریز ہاتھ سے گئی اور ٹرافی بھی جانے کا یقینی خوف پیدا ہوجائے گا.بلاشبہ پاکستانی ٹیم فیورٹ ہے لیکن اس ٹیم نے جس طرح ابتدائی 2میچزکھیلے ہیں،ان میں جان دکھائی نہیں دی ہے.حیدر علی کو باربار آزمانے کی بجائے بہتر ہے کہ سرفراز احمد کو کھلادیں تاکہ وہ اگلے 2میچز میں اپنا مستقبل کلیئر انداز میں دیکھ لیں ،اسی طرح حارث یا حسنین میں سے کسی ایک کا انتخاب کرلیں.

اسی طرح فخرزمان اگر فٹ ہیں تو انہیں کھلانے کے لئے شرجیل کو باہر بٹھانا غلط فیصلہ ہوگا،اس کے لئے بھی پھر حیدر علی کو دیکھنا ہوگا کہ وہ مسلسل ناکام جارہے ہیں تو ان کا نام ہی بہتر رہے گا کہ وہ دائیں بائیں ہوں.فخرزمان کو کھلایا ضرور جائے گا.کرک سین کا ماننا ہے کہ پاکستانی ٹیم منیجمنٹ اب کسی بھی قسم کے رسک سے باہر نکل گئی ہے.

تحقیق کے مطابق پاکستان اور جنوبی افریقا کی ٹی 20 سیریز جیتنے کی ایک نئی مگر انوکھی روایت قائم ہونے جارہی ہے.پاکستان 2018 سے اپنے ملک یا دوسرے ہوم گرائونڈ عرب امارات سے باہر کسی بھی ملک کے خلاف ٹی 20 سیریز نہیں جیت سکاہے.2018 کی آخری سیریز اسکاٹ لینڈ میں جیتی تھی اور یا پھر زمبابوے میں 3ملکی کپ جیتا تھا،اس کے بعد سے 9 سیریز کے دوران پاکستان اپنے ملک یا عرب امارات میں تو جیتا ہے لیکن ان 2مقام کے علاوہ دنیا کے کسی ملک میں ٹرافی نہیں اٹھا سکا ہے تو 3 سال بعد 10 ویں سیریز میں پاکستان کے پاس یہ موقع آیا ہے.دوسری جانب جنوبی افریقا کا اپنے ہوم گرائونڈ میں یہ مسئلہ ہے کہ وہ 2 سال سے کوئی باہمی ٹی 20 سیریز کی ٹرافی نہیں لہراسکا ہے،آخری بار اپنے ملک میں مارچ 2019میں جیتا تھا جب سری لنکا کو شکست دی.وہ اس کے بعد سے کہیں بھی نہیں جیتا،5سیریز اپنے ملک اور باہر کی دنیا میں کھیلا،ہر مقام پر ناکام گیا ہے.دونوں ممالک کے لئے اس حوالہ سے بھی یہ میچ نہایت اہم ہے کہ کم سے کم ناقابل شکست رہنے کا جواز بنے گا اور شاید ٹرافی اٹھانے کا سبب بھی.

کرک سین تبصرے کے مطابق ٹاس جنوبی افریقا کے حق میں جاسکتا ہے اورمیچ کانٹے کا ہوگا.پاکستان دبائو میں بھی آسکتا ہےاور ایک بڑی مشکل میں پھنس سکتا ہے.محمد حفیظ کا کردار نہایت اہمیت کا حامل ہوگا اور شاید اس کی وجہ سے بچت ہوجائے .