انتظار ختم،پی ایس ایل6کا پہلا بڑا مقابلہ آج،فیورٹ،فاتح اور ناکام کون،اہم رپورٹ

عمران عثمانی
Image By cricketpakistan
پاکستان سپر لیگ 6 کی وسل بجنے کا وقت آگیا،ہفتہ 20 فروری 2021 کوکراچی میں رنگا رنگ ،سادہ پروقار تقریب کے فوری بعد افتتاحی میچ کھیلا جائے گا،نیشنل اسٹیڈیم کراچی تیار ہے۔دفاعی چیمپئن کراچی کنگز اور کوئٹہ گلیڈی ایٹرز پہلے میچ میں آمنے سامنےہونگے،گویا سرفراز احمد اور عماد وسیم میں جوڑ پڑے گا۔اگر کوئی بھولا نہ ہو،اگر کسی کو یاد ہو تو گزشتہ سال کی پی ایس ایل کے رائونڈ اسٹیج کا آخری میچ کوئٹہ نے کراچی ہی کے خلاف کراچی ہی میں کھیلا تھا۔وہ 15 مارچ کا دن تھا،کراچی کے اسی میدان میں ہوم ٹیم کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرز نے 5وکٹ سے کامیابی حاصل کی۔کراچی کنگز نے150رنزکئے تھے،جواب میں کوئٹہ نے 17ویں اوور میں فتح حاصل کرلی لیکن ایک اور دلچسپ بات یہ ہے کہ اسی لیگ کے دونوں کے ابتدائی میچ میں بھی کوئٹہ نے میدان مارا تھا،اس نے کراچی کنگز کو23 مارچ کو 5ہی وکٹ سے شکست دے دی تھی،کیا اتفاق تھا کہ تب بھی میدان کراچی کا ہی تھا اور یہ بھی اچھا اتفاق رہا کہ دونوں بار 5وکٹ سے جیت اپنے نام کی۔اس بار کراچی ٹیم 156 رنزتک محدود رہی تھی۔
کرکٹرزو آفیشلز لفٹ میں پھنس گئے،محمد حفیظ نے واہ واہ کردی،ماجرا کیا ہے
کوئٹہ نے اگرچہ فائنل 4میں جگہ نہیں بنائی تھی لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ گزشتہ سال اس نے کراچی کنگز کو دونوں میچز میں اس کے ہوم گرائونڈ میں گھس کر مارا تھا،اس لئے یہ دونوں زخم پرابھی گہرے ہیں کہ پرانے نہیں ہوئے۔پی ایس ایل تاریخ دیکھی جائے اور اچھے انداز میں دیکھی جائے تو یہاں بھی کراچی کنگز کے لئے اندھیرا ہے کیونکہ 10 میچز میں سے 7 میں کوئٹہ نے کامیابی اپنے نام کی ،کراچی کے حصہ میں صرف 3فتوحات ہی آسکی ہیں،یہاں بھی میزبان ٹیم خسارے سے دوچار ہے۔
پاکستان سپر لیگ کی ہسٹری دیکھی جائے تو کراچی کنگز دفاعی چیمپئن ضرور ہے لیکن اس کا ایک ہی ٹائٹل ہے اور ایک ہی فائنل ہے جبکہ سرفراز کی قیادت میں کھیلنے والی کوئٹہ ٹیم نے بھی اگرچہ ایک ہی ٹرافی لہرائی ہے لیکن اس نے 3 فائنل کھیل رکھے ہیں،چنانچہ اوور آل ریکارڈ میں بھی کوئٹہ آگے ہے۔کوئٹہ نے پی ایس ایل تاریخ کے 52 میچزمیں سے 30 جیتے ہیں اور اس سے کافی کم 21 ہارے ہیں،ایک میچ بے نتیجہ رہا ہے جب کہ اس کے مقابل کراچی ٹیم نے 54 میچز کھیلے ہیں اور مزے کی بات یہ ہے کہ 24 جیتے اور اس سے زائد 27میں وہ ہارے ہیں۔2میچ بے نتیجہ گئے،ایک ٹائی کرکے بھی ہارگئے۔
دونوں کپتانوں کی پرفارمنس دیکھی جائے تو سرفرازحمد نےتمام 52میچزمیں قیادت کی ہے اور وہ اتفاق سے کوئٹہ کی کپتانی کرنے والے واحد کپتان ہیں،30میں کامیاب رہے،21میں ناکام ہوئے،ان کے مقابل عماد وسیم نے 2018سے اب تک 28میچزمیں کپتانی کی ہے،14 جیتے ہیں اور 11میچ ہارے ہیں۔پی ایس ایل تاریخ کے مجموعی میچز،باہمی میچز،کپتانوں کے میچز،الغرض ہر بات حتیٰ کہ اس ایونٹ کہ جس میں کراچی نے ٹرافی اٹھائی ،اس کے بھی 2 میچز میں کوئٹہ کا غلبہ ہے،ہرجانب سے اس کے حق میں اعدادوشمار گواہی دے رہےہیں۔کوئٹہ ٹیم کے پاس اس کے ٹاپ اسکوررز شین واٹسن اور احمد شہزاد اب نہیں ہیں۔لے دے کے خود سرفراز احمد ہی بچے ہیں جنہوں نے51میچزمیں 866 اسکور کئے ہیں۔اعظم خان اور دوسری جانب دنیا کے بہترین بیٹسمین بابر اعظم کراچی کیمپ میں موجود ہیں،وہ40میچز میں 1253اسکور بناکر ٹاپ پر ہیں۔بائولنگ میں کوئٹہ کے پاس 49وکٹ لینے والے محمد نواز،26وکٹ کاریکارڈ رکھنے والے محمد حسنین،نسیم شاہ،عثمان شنواری ہیں جو 2019 تک کراچی کی نمائندگی کر رہے تھے۔حال ہی میں پروٹیز کے خلاف کامیاب ڈیبیو کرنے والے زاہد محمود ہیں،محمد نواز،انور علی اور قیس احمد آل رائونڈر کے طور پر ہیں۔ڈیل اسٹین ابھی موجود نہیں ہیں ،وہ بھی بعد میں جوائن کرلیں گے۔
شاہد آفریدی اور عمران طاہر کی اسنوکر سے وکٹ اڑانے کی کوشش،حیرت انگیز پریکٹس
کراچی ٹیم میں کولن انگرام،شرجیل،بابر،ڈین کرسٹین،عامر یامین،دانش عزیز وکٹ کیپرز میں جوئے کلارک،کیڈوک والٹن،بائولنگ میں عماد وسیم،محمد عامر،محمد الیاس،وقاص مقصود ،ارشد اقبال وغیرہ ہیں۔
کراچی کنگز کی ٹیم بظاہر مضبوط ہے کیونکہ کوئٹہ کے پاس گزشتہ سال والی اسٹرینتھ نہیں ہے،تینوں شعبوں میں کراچی کو اس پر سبقت حاصل ہے۔
ٹاس جیتنے والی ٹیم کیا کرے گی،ظاہر ہے کہ فیلڈنگ کو ترجیح دے گی لیکن کوئٹہ ٹیم گزشتہ سال ہدف حاصل کرنےمیں ماہر رہی تھی۔وکٹ بیٹسمینوں کے لئے سازگار ہوگی لیکن پیسرز کے لئے بھی مدد موجود ہوگی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں