جنوبی افریقا کی شکست پر دکھی انضمام کا پاکستان کی ناکامی پر حیرت انگیز رد عمل

جنوبئی افریقا کے ہاتھوں پاکستان کی دوسرے ٹی 20میچ میں شکسست پر انضمام الحق نے کہا ہے کہ جیسی یہ ٹیم تھی،مجھے یقین نہیں تھا کہ یہ جیتے گی لیکن پاکستانی ٹیم نے شاید اس میچ کو آسان لیا ،یہ وجہ بھی ہے اور ایک وجہ اور بھی ہے کہ دونوں فارمیٹ میں 3پلیئرز ہی اسکور کرتے آرہے ہیں،یہاں بھی یہی صورتحا ل ہے کہ کوئی اور نہیں چل رہا.

انضمام نے اپنے یو ٹیوب چینل پر کہا ہے کہ مڈل آرڈر کا تگڑا ہونا ضروری ہے لیکن حیدر علی کا مسئلہ ایک ہی چلا آرہا ہے کہ 10 سے 12 اسکور کئے اور گئے،اسکی سوچ یہ ہے کہہر بال پر چھکا،ایسے میچ نہیں جیت سکتے.مڈل آرڈر میں بڑی کمزوری ہے،میں سمجھتا ہوں کہ شاہین کو آرام کی ضرورت ہے،تمام فارمیٹ کھیلے جارہا ہے اس لئے تھکا تھکا لگ رہا ہے.چھوٹے سے فائدے کے لئے انسان بڑے فائدے کو کھودیتا ہے،شاداب خان اچھا پلیئر ہے،اسے اعتماد دینا ہوگا،وہ وکٹ لے کر دے سکتا ہے،وہ ایسا پلیئر ہے کہ وہ پرفارمنس دے سکتا ہے.

انضمام نے اپنے گزشتہ تبصرہ میں جنوبی افریقا کی ٹیم پر شدید تنقید کی تھی اور کہا تھا کہ یہ ایسی ٹیم کھیل رہی ہے جو میں نے 15 سال سے کیا پوری زندگی میں نہیں دیکھی،اس کی بائولنگ،بیٹنگ اور فیلڈنگ میں ہزاروں غلطیاں نکالی تھیں اور اس کی شکست پر دکھی تھے لیکن پیر کے میچ کی اس کی کامیابی پر وہ اسی ٹیم کے کھیل کی مکمل تعریف کر رہے ہیں اور کہا ہے کہ اس ٹیم نے شاندار کم بیک کیا ہے.

انضمام الحق جنوبی افریقا کی شکست پر دکھی،کھری کھری سنادیں،188 اسکور آئی پی ایل میں بھی عبور

انضمام کہتے ہیں کہ وکٹ میں کوئی خاص بات نہیں تھی،جیسے بابر نے 50 بالز پر 5کیا،وہ ایسا لگ رہا تھا کہ جیسے دبائو میں کھیل رہا ہو.انضمام نے اپنی ٹیم کی ناقص پارفارمنس پر کڑی تنقید نہیں کی،ایسا لگ رہا تھاکہ انضمام کے نزدیک پاکستان کی ٹیم دنیا کی کسی بڑی ٹیم سے ہاری ہے،بس لے دے کے ایک ہی بات کردی کہ آج پاکستان کا دن ہی نہ تھا.جنوبی افریقا کو حوصلہ مل گیا،امید ہے کہ اگلے میچز میں دلچسپ مقابلے دیکھنےکو ملیں گے.

انضمام نے اپنے تبصرے میں شرجیل خان کوکھلائے جانے کا ذکر تک نہ کیا،اسی طرح محمد حفیظ کی مسلسل دوسری اننگ میں ناکامی پر بھی لب سی لئے،نہایت ہی آسانی سے ایک بات کہدی کہ پاکستان کا دن نہیں تھا،تو یہی بات گزشتہ میچ میں ہارنے والی پروٹیز ٹیم کے خلاف بھی کہی ہوتی،جنہوں نے 188 کئے تھے اور آخری بال تک پاکستان کا مقابلہ کیا تھا اور بمشکل جیتنے دیا تھا.

پہلے اور دوسرے میچ کا نچوڑ نکال لیں اور جان لیں کہ پروٹیز پہلے میچ بہت مشکل سے ہارے تھے اور انضمام ایسی ہار پر دکھی تھے لیکن پاکستانی ٹیم 14ویں اوور میں میچ ہاری ہے اور انضمام کو پاکستان کی شکست پر جیسے کوئی دکھ ہی نہیں ہوا،حیرت انگیز رد عمل بنتا ہے.سابق کپتان ہیں،سابق چیف سلیکٹر ہیں،جو مرضی بول دیں.

پاکستانی ٹیم 140 کرسکی،بابر نے بھی قابل گرفت اننگ کھیلی اور بائولرز تو جیسے لیٹ ہی گئے،ایسے میں‌شاداب کو یاد کیا جارہا ہے کہ وہ بہت ضروری ہیں ،سوال ہوگا کہ کیا وہ ان فٹ ہوکر باہر گئے یا واپس بھیجے گئے.