جنوبی افریقا کا پاکستان کے خلاف ٹی 20 سیریز میں بی ٹیم بھیجنے کا فیصلہ،وجہ آشکار،بریکنگ نیوز

عمران عثمانی
Image By cricketcountry
جنوبی افریقا کرکٹ ٹیم کے پاکستان لینڈنگ کرنے میں اب ایک دن کا وقت بچا ہے اور سیریز کے آغاز میں 11دن باقی ہیں،ایسے میں جنوبی افریقا کرکٹ سے یہ سنسنی خیز خبر نکلی ہے کہ پاکستان کے خلاف دورے کے اختتام میں شیڈول ٹی 20 سیریز میں ان کی بی ٹیم میدان میں اترے گی۔اے لیول ٹیم کے متعدد کھلاڑی پاکستان کے خلاف ٹی 20 سیریز سے باہر ہونگے۔
یہ سال ورلڈ ٹی 20 کا ہے،ہر ٹیم اس فارمیٹ میں زیادہ سے زیادہ میچز بہتر انداز میں کھیل کر تیاری کرنا چاہتی ہے،ایسے میں کرکٹ جنوبی افریقاکو ایسی کیا سوجھی ہے کہ وہ اپنی بی ٹیم کھلائے،وہ بھی پاکستان جیسی سائیڈ کے خلاف جو اس وقت ٹی 20 انٹر نیشنل رینکنگ میں اس سے ایک درجہ بہتر پوزیشن پر فائز ہے،اس وقت تک پاکستان کا نمبر رینکنگ میں چوتھا اور پروٹیز کا نمبر 5واں ہے۔
جنوبی افریقا کرکٹ بورڈ کے پاس پاکستان کےخلاف ٹی 20 سیریز میں کمزور ٹیم یادوسرے درجہ کی ٹیم تارنے کو جواز موجود ہے لیکن سوال یہ ہے کہ اس میں پاکستان یا اس کے کرکٹ شائقین کا کیا قصور ہوگا کہ وہ اے لیول کے کوالٹی پلیئرز کو اپنے مقابل اور اپنے سامنے ایکشن میں نہ دیکھ سکیں۔
وہ جواز بیان کئے جانے سے قبل یہاں جنوبی افریقا کے دورہ پاکستان کے شیڈول کا تذکرہ ضروری ہے۔
26جنوری سے پہلا ٹیسٹ کراچی میں ہوگا،4فروری سے دوسرا ٹیسٹ راولپنڈی میں کھیلا جائے گا۔
اس کے بعد 3 ٹی 20 میچز 11فروری،13 اور 14فروری کو لاہور میں کھیلے جائیں گے۔
دورے کا یہ شیڈول سامنے آگیا،اب جنوبی افریقا کی اگلی مصروفیات کا جائزہ لیتے ہیں۔
پروٹیز نے اپنے ہوم گرائونڈ پر آسٹریلیا کے خلاف 18فروری سے ٹیسٹ سیریز کا آغاز کرنا ہے۔3میچز کی یہ سیریز ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ کے تناظر میں آسٹریلیا کے لئے نہایت ہی اہم ہے۔
بات یہ ہے کہ پاکستان کے خلاف آخری ٹی 20 اور آسٹریلیا کے خلاف پہلے ٹیسٹ کے درمیان صرف 4دن کا فاصلہ ہے اور کورونا کے دور،کووڈ ٹیسٹ،بائیو سیکیور ببل رولز کے تناظر میں ایک ملک سے دوسرے ملک جا کر 3دن میں میچ کھیلنا ممکن نہیں ہے۔جنوبی افریقا اور آسٹریلیا سیریز کا شیڈول اگرچہ ابھی جاری نہیں ہوا لیکن ابتدائی شیڈول کے مطابق یہی تاریخ بنتی ہے۔
ایسے حالات میں جنوبی افریقا کرکٹ بورڈ پاکستان کے خلاف 8فروری کو ختم ہونے والے دوسرے ٹیسٹ کے بعد کپتان کوئنٹن ڈی کاک سمیت کئی سینیئرز کو ٹیسٹ سیریز کے لئے واپس بلالےگا،ان کی جگہ نئے پلیئرز پاکستان میں ٹی 20 کھیلتے دکھائی دیں گے۔اسی طرح جنوبی افریقا ٹیم کا کوچنگ اسٹاف بھی 2 حصوں میں بٹ جائے گا،ہیڈ کوچمارک بائوچر ٹیسٹ اسکواڈ کے ساتھ واپس اپنے ملک چلے جائیں گے اور ان کے اسسٹنٹ پاکستان میں ٹی 20 اسکواڈ کی نگرانی کریں گے۔
جنوبی افریقا کرکٹ ٹیم پاکستان پہنچتے ہی ریاستی سکیورٹی میں ہوگی،ہوٹل کے اگلے دروازے پر انہیں ایک کلب بھی دیا گیا ہے جس میں تفریح کے لئے متعدد کھیلیں ہونگی۔
جنوبی افریقا نے پاکستان کے خلاف تاحال ٹی 20 اسکواڈ کی رونمائی نہیں کی ہے،امکان ہے کہ دستے میں متعدد نئے پلیئرز شامل ہونگے۔ سوال یہ ہے کہ جنوبی افریقا کااپنا شیڈول جیسا بھی ہو ،کیا یہ مناسب ہوگا کہ بی ٹیم پاکستان میں کھیلتی دکھائی دے.مزے کی بات یہ بھی ہے کہ 2007کے بعد پروٹیز 14 سال کے وقفہ میں پہلی بار پاکستان آرہے ہیں.

اپنا تبصرہ بھیجیں