پاکستان کی فتح،انضمام الحق کی آئی سی سی اور جنوبی افریقا پر شدید گولہ باری،سخت سوالات،جواب مانگ لئے

رپورٹ : عمران عثمانی

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے انٹر نیشنل کرکٹ کونسل اور کرکٹ جنوبی افریقا پر شدید تنقید کرتے ہوئے ان سے ایک سوال پوچھ لیا اور فوری طور پر نوٹس لینے،کارروائی کرنے اور جواب دینے کا مطالبہ کیا ہے،اپنے یو ٹیوب چینل پر بولتے ہوئے پاکستان کے لیجنڈری پلیئرز نے کرکٹ جنوبی افریقا کو انٹر نیشنل کرکٹ چھوڑ کر ایک لیگ کو اہمیت دینے پر شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے مستقبل کے لئے تباہ کن قرار دے دیا ہے.

انضمام کہتے ہیں کہ پاکستان کرکٹ ٹیم نے جنوبی افریقا میں دوسری سیریز جیت لی،پاکستان ایسے کارنامے دکھاتا رہتا ہے،فخر زمان نے کمال کردیا،آئوٹ آف فارم کھلاڑی نے بڑی محنت کی،مشکل وقت گزارا.بابر اعظم نے بھی کلاس دکھائی،یہ بابر کی پہلی بڑی سیریز تھی جس میں اسے فتح ملی ہے،جس وقت یہ ٹیم سامنے آئی تھی،مجھے اس کے جیتنے کی امید نہ تھی،پہلے3پلیئرز کے سوا سب ناکام گئے تو یہ پریشانی کی بات اب بھی ہے.بائولنگ اور فیلڈنگ بہر حال اچھی رہی.

آج کا ٹرننگ پوائنٹ حسن علی کے 11بالز پر 32رنز تھے،وہاں وکٹیں گر گئی تھیں،بابر بھی اس وقت رک چکے تھے،یہ اسکور نہ ہوتا تو پاکستان ہارجاتا،سب سے خطرناک بات یہ ہوئی ہے کہ میں نے اپنی پوری زندگی میں نہیں دیکھا،میںً آج ایک سوال کر رہا ہوں،انٹر نیشنل کرکٹ کونسل سے بھی اور کرکٹ جنوبی افریقا سے بھی کہ یہ سب کیا ہے.

انضمام الحق کہتے ہیں کہ انٹر نیشنل کرکٹ کے لئے ایک خطرناک چیز ہوئی ہے اور بہت ہی بھیانک بھی کہ میں نے اپنے کیریئر میں پہلی بار دیکھا ہے کہ کھلاڑی اپنے ملک کی نمائندگی کی بجائے غیر ملک ایک ڈومیسٹک لیگ کھیلنے چلے گئے ،آئی سی سی کو اس پر ایکشن لینا چاہئے اور جنوبی افریقا بورڈ سے بھی باز پرس کرنا چاہئے کہ آپ نے اپنی انٹر نیشنل کرکٹ کے ہوتے ہوئے ایک چھوٹی سی لیگ جس کی حیثیت ایک ڈومیسٹک ایونٹ کی ہے،اس میں اپنے کھلاڑی کیسے بھیج دیئے،دنیا کے لئے کیا مثال بنوالی کہ وہ اپنا ملک چھوڑیں اور چھوٹی سطح کیلیگ کھیلنے چلے جائیں .ایک لیگ کو اہمیت دی جا رہی ہے.

پاکستان کے سابق چیف سلیکٹر ،سابق کپتان ،ورلڈ کپ 1992کے ہیرو انضمام نے کہا ہے کہ میرا سوال آئی سی سی سے ہے کہ آپ کا رکن ملک انٹر نیشنل کرکٹ کے ہوتے ہوئے اپنے پلیئرز کو ایک لیگ کھیلنے کی اجازت کیسے دے رہا ہے،یہ کیا مذاق چل رہا ہے،مجھے تو پہلے یقین ہی نہ آیا مگر آج جب میچ میں یہ سب دیکھا ہے تو میری تو حیرت سے آنکھیں ہی چندھیا گئی ہیں.یہ کیا مثال سیٹ کردی،آئی سی سی اس بات کو دیکھے کہ اس کا ملک کرکٹ کھیل رہا ہے اور وہاں سے پلیئرز نکل جائیں.

رن آئوٹ والے معاملہ پر ڈی کاک کا کوئی قصور نہ تھا لیکن یہ مسئلہ سنجیدہ ہے.مجھے جنوبی افریقا کے حالات خراب لگ رہے ہیں،یہی حال آئی سی سی کا ہوجائے گا،اگر اس بات کا نوٹس نہ لیا گیا.پاکستان نے سیریز جیت لی،مبارکباد ہو.پاکستان نے اس سیریز میں آخری بال تک فائٹ کرنے کا سبق بھی سیکھ لیا ہے،مجھے یہ بھی اچھا لگا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں