آئی پی ایل شیڈول جاری،ایشیا کپ پر اندھیرا ، پی ایس ایل کے لئے اجالا؟

عمران عثمانی
Image by Twitter
آئی پی ایل 2021 کے شیڈول اور مقامات کا اعلان کر دیا گیا ہے. اس طرح ملتوی شدہ پی ایس ایل 6 کو جلد از جلد کروائے جانے کی کوششوں کو دھچکا لگا ہے. پاکستان کرکٹ بورڈ ذرائع باقی ماندہ آئی پی ایل کو مئی میں کروانے پر بھی غور کر رہے تھے لیکن اب مئی کا پورا ماہ پی ایس ایل کے حوالے سے موزوں نہیں رہے گا.
بھارتی کرکٹ بورڈ کے فیصلے کے مطابق اس سال کی لیگ 9 اپریل سے شروع ہوگی جو 30 مئی تک جاری رہے گی. میچز 6 مختلف مقامات پر کروائے جائیں گے اور اہم بات یہ ہے کہ تمام میچز خالی گرائونڈ میں ہونگے. بھارت جس نے رواں ماہ ہی انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ سیریز جیتی ہے اس میں اس نے مخصوص شرح کے اعتبار سے شائقین کو اجازت دی تھی لیکن اب لیگ کے لئے ایسا کوئی رسک نہیں لیا گیا .بظاہر اس کی کوئی وجہ نہیں ہے لیکن یہ بات طے ہے کہ حالیہ ملتوی ہونے والی پی ایس ایل تجربہ سے اسے کافی مدد ملی ہوگی کہ شائقین کی میدانوں میں آمد رسکی بات ہے. گزشتہ لیگ 2020 کے آخر میں یو اے ای اے ہوئی تھی.
آئی پی ایل 2021 کے ابتدائی شیڈول کے سامنے آنے کے بعد مئی میں پاکستان کو غیر ملکی پلیئرز دستیاب نہیں ہونگے.
تو کیا آئی پی ایل پی ایس ایل کی راہ میں رکاوٹ بن گئی؟
ایسی بات بھی نہیں ہے کیونکہ آئی پی ایل ونڈو پہلے سے طے تھی اور اب اس کے شیڈول نے بہت کچھ واضح کر دیا ہے. پی سی بی کو اب اپنے اگلے پلان پر کام کرنا ہوگا .پاکستان کے لئے بڑا مسئلہ یہ بھی ہے کہ انٹرنیشنل ٹیموں کے اگلے شیڈول دورہ پاکستان سے قبل وہ ناکامی کا لیبل اتارنا چاہتا ہے اس لئے ستمبر سے قبل لیگ کا متمنی ہے.
کرک سین تحقیق کے مطابق ایک بات تو اب قریب کلئیر ہوگئی ہے کہ اس سال پلان کے مطابق جون میں ایشیا کپ ممکن نہیں ہوسکے گا .بھارتی ٹیم ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ فائنل میں داخل ہوچکی ہے اور اس نے 18 جون سے 22 جون تک انگلینڈ میں ٹیسٹ کھیلنا ہے اور اس کے لئے اسے کم سے کم 14 روز قبل انگلینڈ جانا ہوگا. اب آئی پی ایل لیگ شیڈول سامنے آنے کے بعد یہ بھی واضح ہوا کہ جون میں شیڈول ایشیا کپ ممکن نہیں. 30 مئی کو بھارتی لیگ ختم ہوگی. تمام بھارتی و غیر ملکی اس میں شامل ہونگے. اس کے 18 دن بعد ٹیسٹ چیمپئن شپ فائنل ہے. اس لئے اب ایشیا کپ جون میں تو نہیں ہوسکے گا. سوال یہ ہے کہ کب ممکن ہے
اس کا جواب یہ ہے کہ نومبر میں شیڈول ورلڈ ٹی 20 سے قبل ممکنہ جگہ نہیں مل رہی اس لئے بقول پی سی بی چیئر مین احسان مانی ،اس کا انعقاد مشکل ہوگا.
یہ بات تسلیم کر لی جائے کہ ایشیا کپ اس سال نہیں ہوسکے گا تو پھر جون میں پاکستان کی کیا مصروفیات ہیں .جون ایشیا کپ کے لئے مختص تھا اگر بھارت دستیاب نہیں ہے اور ایشیا کپ ملتوی ہے تو پاکستان کے ساتھ سری لنکا،بنگلہ دیش کے کھلاڑی فارغ ہونگے .آسٹریلیا، انگلینڈ وغیرہ سے وہ پلئیرز جو اپنی قومی ٹیم سے فارغ ہونگے ،وہ پاکستان آسکتے ہیں .جون میں 2 اور مسائل بھی آڑے آسکتے ہیں .پاکستان کی گرمی اور انگلینڈ کی کائونٹی، 100 بالز ایونٹ کا شیڈول بھی ٹکراسکتا ہے اس لئے پاکستان شاید جون کا فائدہ بھی نہ اٹھا سکے.