جمیکا میں وکٹوں کی جھڑی،پاکستان 217،ویسٹ انڈیز کے 2 کھلاڑی صفر پر باہر

0 27

رپورٹ : عمران عثمانی
سبینا پارک کی پچ کا کمال،بائولرزکی دہشت یا پھر ٹیسٹ کرکٹ کی روایتی بے یقینی،پہلے روز رنزکے عوض وکٹیں گر گئیں.ان میں پاکستانی ٹیم کا رنزکے اندر بوریا بستر گول ہونا شامل تھا لیکن ویسٹ انڈیزکی جب 1 اسکور پر 2 وکٹیں گریں تو قومی ٹیم کو ایسا لگا کہ جیسے اس نے بہت زیادہ اسکور بنالئے ہیں.محمد عباس نے اوپر تلے وکٹیں لیں لیکن وہ ہیٹ ٹرک نہیں کرسکے،ان کی حاصل کردہ دونوں وکٹیں ہی چیلنج کی جانے والی تھیں.کیرون پاول کا عمران بٹ نے سلپ میں کیچ پکڑا تو مشکوک سمجھا گیا لیکن تھرڈ امپائر نے طویل جانچ پڑتال کے بعد آئوٹ قرار دیا. نکرم بونیر کو امپائر نے ایل بی ڈبلیو دیا تو انہوں نے ریویو لے لیا،بال بیلز کے اوپری کنارے پر لگی تھی لیکن نئے قانون کے مطابق وہ آئوٹ تھے.دونوں کھلاڑی کھاتہ کھولے بغیر گئے.کم روشنی کے باعث امپائرز نے پیسرز کو بال کرنے سے روک دیا،نتیجہ میں ایک اوور یاسر شاہ نے بھی کیا لیکن اس کے بعد امپائرز نے کھیل ختم کردیا.ویسٹ انڈیز نے اپنی پہلی اننگ میں 2 وکٹ پر 2 رنزبنالئے تھے.محمد عباس نے2 اوورز کئے،دونوں ہی میڈن رہے اور2 وکٹیں اپنے نام کیں .پاکستانی ٹیم کی پہلی اننگ کے جلد آئوٹ ہونے کے باوجود اوورز مکمل نہیں ہوسکے تھے.
پاکستانی بیٹنگ کیسے ناکام،کرک سین تجزیہ سچ
پاکستانی بیٹنگ کا ویسٹ انڈیز میں پہلے ٹیسٹ کے پہلے روز برا حال،فواد عالم ایک بار پھر فولاد بن گئے اور ٹیم کو مکمل تباہی سے بچالیا ،فہیم اشرف نے ان کا اچھا ساتھ دیا لیکن کسی ایک یا دونوں کی بے وقوفی سے ایک رن آئوٹ ہوا اور دوسرے کو سپورٹ ملنا بند ہوئی تو سار ا ملبہ ایک بار پھر پاکستان پر گرا.ٹیم پہلے ٹیسٹ کی پہلی اننگ میں پہلے ہی روذ صرف 217 رنزبناکر ہیڈ کوچ مصباح الحق اور بائولنگ کوچ وقار یونس کی آغوش میں جاسوئی.حماقتوں اور بے وقوفیوں کی انتہا دکھائی دی.کرک سین نے گزشتہ 5 دن اسے اپنے مختلف آرٹیکلز میں بار بار اشارہ کیا تھا کہ یہ بیٹنگ لائن ایسے ہی ڈھے جائے گی اور پھر یہی کچھ ہوا.
تو چل،میں آیا،اوپنرز آگے پیچھے باہر
جمعرات کو کنگسٹن جمیکا کے سبینا پارک میں ویسٹ انڈین کپتان نے ٹاس جیت کر پاکستان کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دی،یہ فیصلہ توقعات کے عین مطابق تھا کیونکہ نئی پچ،بارش والے ماحول اور ابر آلود موسم سے فائدہ ہی اٹھایا جاتا ہے.کرک سین تجزیہ کے عین مطابق پاکستان کے دونوں اوپنرز ناکام ہوگئے .کرک سین یہ کیوں لکھ رہا تھا کہ یہ ناکام ہونگے،اس لئے کہ یہ بنیادی طور پر مکمل اوپنرز نہیں ہیں.آئوٹ آف فارم چلے آرہے تھے اور زمبابوے کے خلاف آخری سیریز میں شدید دبائو کا شکار تھے،چنانچہ یہ بات ٹیم منیجمنٹ کو دکھائی نہیں دی.پاکستان نے 21 کے مجموعہ پر دونوں نام نہاد اوپنرز کو کھودیا.شاید طے کرچکے تھے کہ تو چل،میں آیا.پہلے عمران بٹ 11 اور پھر عابد علی 9رنزکر کے آئوٹ ہوئے.اظہر اعلی اور بابر اعظم نے قریب پاکستان کو مشکل ،دبائو اور سب سے بڑھ کر خطرناک کنڈیشن سے نکال دیا تھا اور یہاں تک کہ کھانے کے وقفہ سے کچھ دیر قبل بارش شروع ہوئی تو امپائرز نے کھیل روک دیا،اسی دوران کھانے کاوقفہ کرلیا گیا.
اظہر اور بابر کی بھی نقل،اوپر تلے آئوٹ
بارش کےبعد جب پاکستان نے 34 رنز 2 وکٹ سے اننگ شروع کی تو بابر اعظم اور اظہر علی بظاہر آرام سے کھیل رہے تھے،بادل بھی رخصت ہورہے تھے اور موسم بھی بہتر ہورہا تھا.پاکستان کا اسکور 68 ہوچکا تھا،ایسا لگتا تھا کہ بارش کی چلمن کے بعد پاکستانی ٹیم سنبھل جائے گی اور بڑا اسکور کرے گی لیکن پھر وہ کچھ ہوا جو پاکستان کا خاصہ ہے.کمال یہ ہوگئی کہ جیسے دونوں اوپنرز طے کرچکے تھے کہ تو چل میں آیا،ایسے ہی کپتان اظہر علی سے یہ بات سیٹ کر گئے تھے کیونکہ 68 کے مجموعہ پر پہلے اظہر علی 17 اور پھر اسی اسکور پر بابر اعظم 30 کر کے آگے پیچھے باہر ہوگئے.اظہر علی نے 17 رنزکے لئے 79 گیندیں کھیلیں اور سست ترین بیٹنگ کی.68 پر 4 وکٹ گرنے کے بعد ساری امیدیں فواد عالم اور فہیم اشرف سے ہوگئی تھیں لیکن جیسے ہی دونوں سیٹ ہوئے اور پاکستان کے 100 اسکور مکمل ہوئے تو ان فارم وکٹ کیپر محمد رضوان 23 رنزبناکر ہولڈر کا شکار بن گئے.
پاکستانی اننگ کا شاندار لمحہ،حقیقت سے برے خواب میں تبدیل
آل رائونڈر کے طور پر ٹیم میں شامل ہونے والے فہیم اشرف نے فواد عالم کے ساتھ ہمت باندھی اور اسکور کو تیزی سے آگے بڑھانے کی کامیاب کوشش کی.دونوں نے 21 اوورز میں 85 رنزکی شراکت قائم کر کے ایسا اسٹیج بنادیا کہ لگا پاکستان اب 300 کے قریب اسکور تو ضروبنالے گا .فہیم اشرف کی بیٹنگ دیدنی تھی جنہوں نے 66 بالز پر 44رنز کئے لیکن وہ 186 کے مجموعہ پر رن آئوٹ ہوگئے،در اصل یہاں سے پاکستانی ٹیم ہی رن آئوٹ ہوگئی.ان کے جانے کے بعد فواد عالم نے اگرچہ ہاف سنچری مکمل کی لیکن یاسر شاہ،شاہین آفریدی اور محمد عباس صفر کا کھاتہ ہی درج کر گئے.اکیلے حسن علی کے 14 اسکور نے کیا کرنا تھا کیونکہ117 بالز پر 56 رنزبنانے والے فواد عالم 9 ویں وکٹ کی صورت میں چل دیئے تھے.پاکستان نے اپنی آخری 5 وکٹیں صرف 31رنزکے اندر گنوادیں اور پوری ٹیم 70 اوورز اور 3 بالز پر 217 پر آئوٹ ہوگئی.
تو بھی چل،تو بھی چل اور میں آیا
کیا یہ کم تھا کہ پہلے 2 اوپنرز ایک ہی اسکور 21 پر گئے،پھر کپتان بابر اور اظہر علی ایک ہی ٹوٹل 68 پر ایک دوسرے کے پیچھے پویلین گئے ،شاید یہ کم ہی تھا کیونکہ پاکستان کے آخری 3 کھلاڑی تو ایک دوسرے کے قدموں پر چلتے باہر گئے .217 کے اسکور پر 8ویں ،اسی پر 9ویں اور پھر اسی ہی پر 10ویں وکٹ گری،ایک دوسرے کو یہاں سپورٹ کرنے والے حسن علی،فواد عالم اور محمد عباس تھے.اس لئے ہی کہا جاتا ہے کہ تو چل تیز چل،ورنہ میں آگے نکل جائوں گا.چ
ویسٹ انڈیز کی جانب سے جیسن ہولڈر نے صرف26 رنز دے کر 3 اورجارڈن سیلس نے 70رنزکے عوض 3 وکٹیں لیں.کمار روچ نے 47 رنزدے کر 2 کھلاڑیوں کو ٹھیکانے لگایا.ایک وکٹ کیل میئرز کے حصہ میں آئی.
اس سے قبل ویسٹ انڈیز نے ٹاس جیت کر پاکستان کو پہلے کھلایا تھا،پاکستانی ٹیم میں کوئی نیا ایڈونچر نہیں ہوا کیونکہ وہی سلیکشن ہوئی جس کی امید تھی.محمد عباس اور یاسر شاہ نے واپسی کی جب کہ نعمان علی کی جگہ فہیم اشرف آئے،اس طرح پیس اٹیک میں شاہین آفریدی کے ساتھ عباس اور حسن علی بھی تھے.
سبینا پارک کنگسٹن جمیکا میں پاکستان 44 برس بعد ٹاس ہارا تھا،خیر اس کے بعد ابھی بھی ایک اعزاز باقی ہے کہ کہ وہ یہاں 44برس سے ٹیسٹ میچ نہیں ہارا.اس دوران یہاں 2میچزکھیلے گئے اور دونوں ہی پاکستان کے حق میں گئے،اب ویسٹ انڈیز ٹیم کے 2 پر 2 کھلاڑی آئوٹ ہیں،اسے پاکستان کا قرض اتارنے کے لئے 215 رنزبنانے ہیں،میچ مکمل طور پر اوپن ہے،اس لئے دونوں ٹیموں کے لئے دروازے بند نہیں ہوئے ہیں.
یہ سٹوری دلچسپی میں اپنی مثال آپ ہے
رمیز کو لارڈز میں دلہا مل گیا،انضمام کی بھارت سے ایک خواہش ،دلچسپ رپورٹ

Leave A Reply

Your email address will not be published.