گابا ٹیسٹ،آسٹریلیاگر کر سنبھل گیا،پہلے دن سنچری،ایک اور زخمی،ریکارڈ تبدیلیاں

عمران عثمانی
Image By Twitter/cricinfo
گابا ٹیسٹ کا پہلا دن آسٹریلیا کے نام رہا،بھارتی بائولرز کی ابتدائی کامیابیوں کے بعد کینگروز سنبھل ہی گئے اور اس کا کریڈ ٹ مارنوس لبوشین کی سنچری کو جاتا ہے جنہوں نے مشکل وقت میں لمبی اننگ کھیل کر اپنی ٹیم کو مکمل تباہی سے بچالیا ہے۔ٹیم نے 5وکٹ پر 274 رنزبنالئے ہیں۔
4میچز کی سیریز کے چوتھے وآخری مگر فیصلہ کن ٹیسٹ میچ کا ٹاس ٹم پین نے جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا،ول پوکووسکی ان فٹ ہونے کی وجہ سے ڈرا پ ہوئے ،اسپنر نیتھن لائن نے 100ویں ٹیسٹ کیپ لے لی،بھارتی ٹیم میں 4تبدیلیاں کی گئیں۔ان میں سے 2کھلاڑیوں نتارجن اورواشنگٹن سندر کو ٹیسٹ کیپ ملی۔وہاری اور ایشون بھی جگہ نہ بناسکے،شردول ٹھاکر اور میانک اگروال کو کھلایا گیا ہے۔
آسٹریلوی کپتان اپنی ہی عوام کے پائوں پڑگئے،اسپنر کا 100وں ٹیسٹ،گالے میں مسلسل چوتھا صفر
اننگ کا آغاز تباہ کن تھا،اوپنر ڈیوڈ وارنر ایک بار پھر ناکام رہے اور 4کے مجموعہ پر ایک رن بناکرمحمد سراج کا شکار بنے،تھوڑی ہی دیر بعد دوسرے اوپنرمارکوس ہیرس 5رنزبناکر ٹھاکر کی زد میں آگئے،آسٹریلیا نے 17پر 2وکٹیں کھودی تھیں۔تیسری وکٹ پر سٹیون سمتھ اور لبوشین نے 7 رنزکا اضافہ کیا ،اس شراکت کے ٹوٹنے سے قبل لنچ تک بھارت کا اسکور 2وکٹ پر 65 تھا۔87 کے مجموعہ پر سٹیون سمتھ کی قیمتی وکٹ واشنگٹن سندر نے لے لی،یہ ان کی ڈیبیو وکٹ بھی تھی۔سمتھ 36 رنز بناسکے،نئے بیٹسمین میتھیو ویڈ نے لبوشین کے ساتھ مل کر نہایت دفاعی انداز میں بلے باز کی اور چائے کے وقفہ تک اسکور 3وکٹ پر154 رنزتک پہنچادیا۔لبوشین نے اس کے بعد اپنی سنچری مکمل کی،انہوں نے اس کے لئے195 بالز کھیلیں۔200کے مجموعہ پرنتارجن نے اپنی ٹیم کو بریک تھرو دیا اور ویڈکو45پر شکار کرکے اپنی اولین ٹیسٹ وکٹ لی،آسٹریلیا کی 113رنزکی قیمتی شراکت بھی انہوں نے توڑ ڈالی۔213 کے مجموعہ پر بھارت کی دن میں سب سے بڑی کامیابی رقم ہوئی جب 108رنزکی اننگ کھیلنے والے لبوشین نتارجن کے ہاتھوں وکٹ گنوابیٹھے۔آسٹریلیا نے کھیل کے اختتام تک مزید کوئی نقصان نہیں ہونے دیا اور87 اوورز کے کھیل میں مجموعہ 5وکٹ پر 274 تک پہنچادیا۔کیمرون گرین 28 اور کپتان ٹم پین38 پر کھیل رہے ہیں۔
گابا میں کل سےجنگ،بھارت74برس سےمسلسل ناکام،آسٹریلیا31میچز سے ناقابل شکست
بھارت کی جانب سےنتارجن کامیاب بائولر رہے جنہوں نے 63 رنز دے کر 2وکٹیں لیں جبکہ سراج،ٹھاکر اور سندر نے ایک ایک وکٹ لی ہے۔نتارجن پہلے بھارتی کھلاڑی بن گئے ہیں کہ جنہوں نے ایک ہی دورے کے دوران تینوں فارمیٹ میں ڈیبیو پر وکٹ لی ہے۔
ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ کے تناظر میں یہ میچ نہایت اہم ہے،اسی طرح سیریز کے فیصلہ کن موڑ میں اس میچ کی اہمیت بہت زیادہ ہے،میزبان ٹیم نہایت ہی زیادہ سنبھل کر بیٹنگ کر رہی ہے۔4 میچز کی سیریز اس وقت 1-1 سے برابر ہے،بھارتی ٹیم کی فیلڈنگ بھی ناقص رہی ہے،فیلڈرز نے کئی مواقع ضائع کئے،17 کے مجموعہ بھارت نے تیسری وکٹ لینے کا گولڈن موقع گنوادیا تھا۔لبوشین کو متعدد چانسز ملے ہیں
بھارتی ٹیم جس نے 1933کے بعد پہلی بار کسی بھی ٹیسٹ میں ایک ساتھ 4تبدیلیاں یا ایک سیریز میں زیادہ کیپ دیں،60 سال بعد 20 پلیئرز نے ایک ٹیسٹ سیریز کھیلی ہے،کیونک ،انجریز نےاس کا پیچھا اس میچ میں بھی نہیں چھوڑا،نوودیپ سائنی8ویں اوور میںگروئن انجری کا شکار ہوکر میدان سے باہر چلے گئے،انہیں اسکین کے لئے لے جایا گیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں