فخر زمان رستم زماں،پی ایس ایل روایت بھی مدد کو آگئی،قلندرز نے کنگز کوپچھاڑ دیا

عمران عثمانی
Image Issues By PCB

لاہور قلندرز کی کراچی میں کراچی کنگز کے خلاف زبردست دھمال،فخر زمان رستم زمان بن گئے،دفاعی چیمپئن کراچی کنگز کی ٹیم اچھے حالات کے باوجود جیتنے میں ناکام رہی۔قلندرز کو بعد میں بیٹنگ کرتے ہوئے رواں پی ایس ایل روایت کی مدد کا یقین تھا یا زمان کے ساتھ ڈنک کے ڈنڈاگھمانے کا یقین تھا کہ صفر پر 2وکٹ گنوانے اور حفیظ کے جلد آئوٹ ہونے کے باوجود میچ 6وکٹ سےجیت لیا،روایتی حریفوں کا ایسا میچ تھا جو اپنی جگہ بڑی اہمیت رکھتا تھا ،ایسے میچ میں سپر ہیروز بابر اعظم چلے اور نہ ہی محمد حفیظ مگر دونوں کی بیٹنگ لائن نے درست معنوں میں اپنی فارم اور ردھم شو کیا ۔187 کا ہدف قلندرز نے فخر،ڈنک کی شاندار اننگز کی بدولت پورا کرلیا۔پی ایس ایل 6کی عجب روایت قائم رہی کہ ٹاس جیتو،پہلے فیلڈنگ کرو،میچ آپ کا یا یوں کہہ لیں کہ ٹاس ہارو،میچ ہارو۔19 ویں اوور میں عامر کی شاندار بائولنگ بھی قلندرز کی مدد گار ہوگئی،ایج سے چوکے لگنے لگے.
187رنزکے تعاقب میں قلندرز کا آغاز نہایت ہی تباہ کن تھا،ایسالگتا تھا کہ جیسے بیٹسمین بیٹ اٹھانا بھول گئے ہوں۔جس ٹیم کے صفر پر 2آئوٹ ہوجائیں اس کے لئے کم بیک آسان بات نہیں رہتی،کپتان سہیل اختر رن آئوٹ ہوئے اورجوئے ڈینلی پہلی ہی گیند پر محمد عامر کے ہاتھوں کلین بولڈ ہوگئے،اتنے بڑے نقصان کے بعد محمد حفیظ نے فخرزمان کو جوائن کیا اور ابھی تھوڑا سیٹ ہی ہوئے تھے کہ 33 کے مجموعہ پر قلندز کو اس وقت بڑا جھٹکا لگا جب ان فارم بیٹسمین محمد حفیظ بھی ساتھ چھوڑ گئے۔9بالز پر 15رنزبنانے والے حفیظ وقاص مقصود کی بال پر بابر اعظم کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔
یہ نازک ترین موقع تھا جب گزشتہ سال کے ہیرو بین ڈنک نے گرائونڈ میں قدم رکھا اور انہوں نے جب اننگ آگے بڑھائی تو کرکٹ فینز کو گزشتہ سال والی دھواں دھار اننگز یاد آگئیں۔ڈنک اور فخر نے 11 اوورز میں اسکور 89تک پہنچادیا ۔پھر 100 اور 150 بھی بن گئے،فخر کے ساتھ ڈنک نے بھی ہاف سنچری مکمل کرلی.قلندرز کو آخری 18بالز پر 36رنزکی ضرورت تھی جبکہ فخر کو سنچری مکمل کرنے کے لئے 17 رنزدرکار تھے.152 کے مجموعہ پر کراچی نے میچ میں واپسی کرلی جب فخر زمان اونچا شاٹ کھیل کربابر اعظم کے ہاتھوں کیچ ہوگئے،انہیں کرسٹین نے شکار بنایا،فخرنے 54بالز پر83کئے جسمیں4چھکے اور 8چوکے شامل تھے،ڈنک کے ساتھ 119 کی شراکت تمام ہوئی،کنگز کی واپسی سے میچ سنسنی خیز ہوگیا.نئے بیٹسمین ڈیوڈ وائزے تھے،2اوورز میں 30رنز درکار تھے کہ سب سے اچھے بائولر عامر کا 19واں اوور گلے پڑگیا.اس میں 20 رنز بن گئے،آخری اوورمیں 10رنزکی ضرورت تھی.ڈیوڈ ویزا نے پہلی بال پر چھکا ماردیا،قلندرز نے 4بالز قبل میچ 6وکٹ سے جیت لیا،ڈیوڈ ویزا نے 9بالز پر ناقابل شکست 29 اور بین ڈنک نے 43 بالز پرناقابل شکست 57رنزبنائے.عامر کے 4اوورز میں 34 رنز بنے.ایک وکٹ لی.
اس سے قبل کراچی کنگز کے کپتان عماد وسیم ٹاس ہارے تو حریف کپتان سہیل اختر نے انہیں بیٹنگ کا کہدیا،10میچزکی روایت کے تحت کنگز 99فیصد میچ تو اسی وقت ہارگئی تھی لیکن ظاہر ہے کہ کھیلنا بھی تھا،اب یہ تو ہونہیں سکتا کہ پہلے کھیل کر 220یا 240 کا نہ سوچا گیا ہو ،ضرور خیال آیا ہوگا لیکن ٹیم کی حالت یہ رہی کہ آخری 5اوورز اور خاص کر 2اوورز میں ڈیمانڈ کے مطابق اسکور بن نہیں سکے۔کراچی کنگز کا آغاز بھی تباہ کن تھا۔کپتان بابر اعظم 5،جوئے کلارک 4اور کولن انگرام صفر پر پویلین لوٹ گئے۔کنگز نے 37 پر 3وکٹیں گنوادی تھیں،شرجیل خان کو جب محمد نبی کا ساتھ ملا تو چوتھی وکٹ پر 76اسکور بن گئے،113 کے مجموعہ چوتھا نقصان اٹھانا پڑا۔شرجیل خان 64رنزبناکر قیمتی وکٹ دے گئے۔انہوں نے39 بالز پر 6چھکے اور 5چوکے بھی لگائے۔158پر دوسرے سیٹ بلے باز محمد نبی35 بالز پر 57 اسکور کرکے آئوٹ ہوگئے۔کراچی کنگز کی ٹیم آخری 4اوورزمیں اسکور نہیں کرسکی اور اس نے 5وکٹیں گنوادیں،ان میں ڈینیل کرسٹین 27،عماد صفر،وقاص 12،محمد الیاس 4 اور محمد عامر صفر پر گئے۔ٹیم کا اسکور 9وکٹ پر186 رہا۔قلندرز کی جانب سےشاہین آفریدی نے 27رنز دے کر 3وکٹیں لیں،آخری اوور میں 2آئوٹ کئے۔حارث ،دانیال،وائزے اور پٹیل نے ایک ایک آئوٹ کیا۔