پی ایس ایل 6 کو بڑا دھچکا،پی سی بی کو ایک معجزاتی رپورٹ کا انتظار،فیصلہ ہوگیا

بھارت کی آئی پی ایل کے التوا کے ساتھ ہی کرک سین نے خبر بریک کی تھی کہ پاکستان میں پی ایس ایل 6 کے باقی میچزکا انعقاد خطرے میں ہے،اس وقت تک میڈیا پر ایک ہی خبر چل رہی تھی کہ بھارتی آئی پی ایل ملتوی ہوگئی لیکن کرک سین نے اپنی اس خبر کے ساتھ پی ایس ایل 6 سے متعلق سب سے قبل خبر بریک کی تھی کہ اس کا انعقاد اب مئی کے آخرسے ممکن نہیں لگتا ہے.

یہ خبر اس طرح درست ثابت ہوئی ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے اس کے فوری بعد این سی او سی سے رابطہ کرکے کلیئرنس لینے کی کوشش کی ہے جس میں اسے بری طرح ناکامی کاسامنا کرنا پڑا ہے،ایک ایسے وقت میں کہ جب ملک بھر میں 8مئی سے لاک ڈائون لگنے جارہا ہے اور وہ 16مئی تک جاری رہے گا ،وہاں 23 مئی سے کراچی میں بائیو سیکیور ببل کا نفاذ کیسے ممکن ہوگا.یہ بات تو آسانی سے سمجھ میں آنے والی ہے مگر اس کے باوجود پی سی بی حکام نے این سی او سی حکام سے رابطہ کیا تو پھر یہی جواب ملنا تھا کہ ہم ملک بند کر رہے ہیں اور آپ کرکٹ کی بات کر رہے ہیں.

پاکستان کرکٹ بورڈ کے پاس اب اپنے ملک میں پی ایس ایل کروانے کی ایک ہی معجزاتی صورت بچی ہے کہ پاکستان میں 8مئی سے نافذ ہونے والا لاک ڈائون مکمل طور پر کامیاب ہوجائے اور اس کے اثرات بھی فوری دکھائی دیں اور چٹکی بجاتے ہی حکومت اعلان کردے کہ ملک خطرے سے باہر نکل آیا ہے اور دنیا اپنی آنکھوں سے یہ سب دیکھ لے تو تب ہی یہاں پی ایس ایل ممکن ہوسکے گی ورنہ پی سی بی اپنے دیئے گئے شیڈول پر کراچی میں پی ایس ایل 6کے باقی میچز نہیں کرواسکے گا.

چٹکی بجاتے ہی یہ سب کچھ نہیں ہونا،اس لئے پی سی بی کو اپنی لیگ یا تو متحدہ عرب امارات منتقل کرنی پڑے گی اور یا پھر کچھ وقت کے لئے مزید ملتوی لیکن ملتوی کرنا اس لئے مشکل ہے کہ اگلی کوئی ونڈو دستیاب نہیں ہے،اس لئے زیادہ امکان یہی ہے کہ یہ لیگ اب متحدہ عرب امارات منتقل ہوگی لیکن اس کے لئے بھی ضروری ہے کہ پی سی بی جلد فیصلہ کرے،کیونکہ منتقلی و تیاری میں وقت درکار ہے .خیال ہے کہ عید سے قبل ہی پی سی بی اس حوالہ سے کوئی بڑا اعلان کردے گا.حکومت کی جانب سے جلد کسی قسم کا ریلیف ملنا مشکل ہے اور غیر ملکی پلیئرز کا اتنی جلدی یقین کرلینا بھی ایک چیلنج ہوگا.

پاکستان سپر لیگ 6کے باقی میچز 2سے 20 جون تک کراچی میں شیڈول ہیں ،اس کے بعد قومی کرکٹ ٹیم نے انگلینڈ کا دورہ کرنا ہے اور بھارتی ٹیم کو تو اس سے بھی قبل ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ فائنل کے لئے انگلینڈ کی پرواز پکڑنی ہے ،پھر اگست میں اسے وہاں 5میچزکی ٹیسٹ سیریز بھی کھیلنی ہے،اس لئے وقت بڑا مسئلہ ہے جس کے باعث ایشیا کپ پہلے ہی ملتوی ہوچکا ہے.بھارت بھی اپنی ملتوی شدہ لیگ کے لئے ستمبر اور دسمبر کو دیکھ رہا ہے.