بیٹسمینوں کا دن،ون ڈے ،ورلڈ کپ کی پہلی ڈبل سنچری،میاں داد کا منفرد کارنامہ

عمران عثمانی

کرکٹ کی تاریخ کرکٹرز کو پرانے ریکارڈ یاد کرواتی ہے اور ساتھ میں انہیں پرجوش کرتی ہے کہ وہ اس سے بھی بہتر کریں۔اتفاق سے یہ دن بیٹسمینوں کے لئے اہمیت کا حامل بن گیا ہے،اس روز وہ کچھ ہوا جس کا عام زندگی میں تصور بھی محال ہے اور سب کچھ بیٹسمینوں کا ہی ہے۔کم سے کم 24 فروری کا دن بلے بازوں کی خوش قسمتی کا دن ہے۔دیکھنا ہوگا کہ آج 24 فروری 2021 کو بھارت کے شہر احمد آباد میں پنک بال ٹیسٹ میں بیٹسمین ہی کوئی کارنامہ سرانجام دیتے ہیں یا نہیں اور اسی طرح پی ایس ایل 6میں آج کے میچ میں کیا کچھ خاص ہوسکتا ہے۔
دنیائے کرکٹ میں 24 فروری کا دن کئی اعتبار سے یاد گار ہے،جاوید میاں داد،سچن ٹنڈولکر اور آج کے یونیورس باس کرس گیل کے حسین کارنامے 24 فروری سے جڑے ہیں۔1996 میں آج کے روز جاوید میاں داد نے ایک تاریخ رقم کی جو اس وقت ورلڈ ریکارڈ تھا،انہوں نے چھٹا ورلڈ کپ کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا،گوجرانوالہ میں وہ متحدہ عرب امارات کے خلاف ورلڈکپ میچ میں شریک تھے،بعد میں سچن ٹنڈولکر نے 2011ورلڈ کپ کھیل کر 6ایونٹ کھیلنے کا انکا ریکارڈ برابر کیا،آج بھی یہی 2 کھلاڑی سب سے زیادہ بار ورلڈ کپ کھیلنے کا ریکارڈ رکھتے ہیں۔
ٓآج ہی کے روز 2009میں کراچی ٹیسٹ میں سری لنکا کے کھلاڑیوںسمارا ویرا اور جے وردھنے نے پاکستان کے خلاف ڈبل سنچریز بنائیں اور پھر چوتھی وکٹ پر437رنزکی ورلڈ ریکارڈ پارٹنر شپ قائم کی،اسی میچ میں بعد میں یونس خان نے ٹرپل سنچری بنائی تھی۔
2020یعنی گزشتہ سال میں نیوزی لینڈ نے اپنی تاریخ کا 100واں ٹیسٹ جیتا تو وہ عظیم بیٹسمین راس ٹیلر کا بھی 100واں میچ تھا،اس نے ویلنگٹن میں بھارت کو شکست دی تو یہ دن راس ٹیلر بیٹسمین کے لئے خاص اہمیت کا حامل رہا۔
11برس قبل 2010میں آج کے دن وہ کچھ ہوگیا جس کا تصور بھی نہیں تھا،بھارت کے لیجنڈری بیٹسمین سچن ٹنڈولکر نے ایک روزہ کرکٹ میں پہلی ڈبل سنچری جڑ دی،انہوں نے جنوبی افریقا کے خلاف گوالیار میں یہ کارنامہ سر انجام دیا اور ایک روزہ کرکٹ میں پاکستان کے سعید انور کا 13 سالہ پرانا ریکارڈ توڑ دیا جو انہوں نے1997 میں 194کی ہائی ون ڈے اننگ کھیل کر بنایا تھا۔بعد میں 6مزید ڈبل سنچریز بنیں جن میں سے 3روہت شرما نے بنائیں لیکن 24 فروری کے روز بھارتی بیٹسمین ٹنڈولکر کی ڈبل ون ڈے سنچری کاکارنامہ تھا۔
بات یہاں ختم نہیں ہوتی ہے۔ٹنڈلکر نے یہ سب 2010میں کیا تھا تو ٹھیک اس کے 5سال بعد ویسٹ انڈیز کے کرس گیل نے آج ہی کے روز صرف ڈبل سنچری ہی نہیں بلکہ تیز ترین ون دے ڈبل سنچری اور اس سے بھی بڑھ کر ورلڈ کپ تاریخ کی پہلی دبل سنچری بنادی،انہوں نے کینبرا میں ورلڈ کپ کے میچ میںزمبابوے کے خلاف مار دھاڑ کی،پہلی سنچری 105 بالز پر مکمل کی اور 200 اسکور مکمل کرنے کے لئے انہوں نےمحض33 بالیں مزید کھیلیں۔
چنانچہ کرکٹ کی دنیا میں 24 فروری کے روز بیٹسمینوں نے تاریخی کارنامے سرانجام دیئے ہیں۔اب تو یہ سننے کو باقی ہے کہ ٹی 20 فارمیٹ میں کوئی بیٹسمین پہلے 100 اسکور 36 اور دوسرے 100 اسکور 30 بالز پر مکمل کر کے66گیندوں پر ڈبل سنچری جڑ دے۔ایسا ہونا بھی کوئی عجب بات نہ ہوگی۔