ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ الیون سے بابر اعظم اورکوہلی آئوٹ،پاکستان مکمل باہر،تنقید جائز

تجزیاتی رپورٹ : عمران عثمانی

پاکستان کرکٹ ٹیم ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ فائنل سے کوسوں دور رہی،دنیا کی چند خوش قسمت ٹیموں میں سے ایک تھی جسے اپنے وقت میں شیڈول کے مطابق تمام سیریز کھیلنے کو ملیں .کوروناکی وجہ سے اس کی کوئی سیریز ملتوی یا منسوخ نہیں ہوئی .بنگلہ دیش کے خلاف ایک ٹیسٹ میچ ہی نہیں ہوسکا،اس کے علاوہ اس نے سب کچھ پایا لیکن فائنل سے محرومی تو اپنی جگہ تھی،اب ایک اور بات نے پاکستانی پلیئرز کی کوالٹی و اسکلز پر سنگین سوالات اٹھادیئے ہیں.

پاکستان میں دو قسم کے مائنڈ سیٹ ہیں.ایک وہ جن کے مخصوص مقاصد ہوتے ہیں،مخصوص کھلاڑیوں کی نگہبانی ہوتی ہے،وہ مائنڈ سیٹ مستقبل کی اچھی تصویر کی پروا کئے بنا اپنے پسندیدہ پلیئرز کے محافظ بنے ہوتے ہیں.دوسرا مائنڈ سیٹ پاکستان کرکٹ ٹیم اور اس کے پلیئرز پر ہر وقت تنقید کا ہے،اس میں کئی سابق کرکٹرز پیش پیش ہیں.بے شمار لوگ اور مداح ان کی تنقید برداشت نہیں کرتے کہ ٹیم جنوبی افریقا و زمبابوے میں جیت بھی رہی ہو تو بھی ان کی جانب سے تنقید آتی ہے.

کرک سین کاماننا ہے کہ رمیز راجہ،شعیب اختر،انضمام الحق،عامر سہیل،عاقب جاوید اور کبھی کبھار جاوید میاں داد بھی،جب بھی بولتے ہیں اور جیسا بھی بولتے ہیں،درست بولتے ہیں ،اس لئے کہ جنوبی افریقا کی بی ٹیم اور زمبابوے کی 12 ویں درجہ کی ٹیم سے جب پاکستانی ٹیم رینگ رینگ کر جیتے گی تو تعریف نہیں بنے گی.اب اس کا ثبوت دیار غیر سے بھی آگیا ہے.

ورلڈٍ ٹیسٹ چیمپئن شپ کا فائنل 18سے 22 جون تک سائوتھمپٹن میں کھیلا جائے گا.بھارت اور نیوزی لینڈ مدمقابل ہونگے.کرکٹ کے معروف ادارے وژڈن نے ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ الیون کے عنوان سے بیسٹ الیون کا انتخاب کیا ہے اور یہ خاص کر پرفارمنس کی بنیاد پر ہی ہوا ہے،اس میں پاکستان کا کوئی کھلاڑی شامل نہیں ہے،بابر اعظم بھی اپنی ہی بعض ناقص اننگز کی وجہ سے باہر ہوگئے ہیں.

وژڈن ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ الیون کی کپتانی کین ولیمسن کے سپرد کی گئی ہے.دیگر پلیئرز کچھ اس طرح سے ہیں.11میچزمیں 1030 رنزبنانے والے بھارت کے روہت شرما اوپنر ہیں.10میچز میں 999رنز بنانے والے سری لنکا کے کرونارتنے دوسرے اوپنر ہیں.13میچز میں 1675 اسکور کرنے والے آسٹریلیا کے مارنس لبوشین ون ڈائون پوزیشن کے لئے آئے ہیں.آسٹریلیاکے ہی اسٹیون اسمتھ 13میچز میں 1341 اسکور کے ساتھ چوتھی پوزیشن کےحقدار قرار پائے ہیں.اگلا نمبر کیوی کپتان کین ولیمسن کا ہے جن کے9میچزمیں 817 اسکور ہیں.انگلینڈ کے بین سٹوکس آل رائونڈر کے طور پر آئے ہیں کیونکہ انہوں نے17میچزمیں 1334 اسکور بنائے ہیں اور 34 وکٹیں بھی لی ہیں.وکٹ کیپر بھارت کے رشاب پانت منتخب کئے گئے ہیں جنہوں نے 11میچزمیں 662اسکور کئے.نیوزی لینڈ کے بائولر کیل جیمسن 6میچزمیں 36 وکٹ،بھارت کے ایشون 13میچزمیں 67وکٹیں،آسٹریلیا کے پیٹ کمنز 14میچز میں 70وکٹوں اورانگلینڈ کے سٹورٹ براڈ 17میچز میں 69وکٹوں کے ساتھ اس اسکواڈ کا حصہ بنے ہیں.

ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ الیون میں بھارت کے 3کھلاڑی ضرور آئے ہیں لیکن اس کے کپتان ویرات کوہلی اس ٹیم سے ڈراپ کئے گئے ہیں کیونکہ کوہلی 14میچزمیں صرف 877اسکور کرسکے.آسٹریلیا کے3کھلاڑی شامل ہیں لیکن ٹیم فائنل کی اہل نہیں .اسی طرح انگلینڈ کے 2پلیئرز آئے ہیں لیکن وہ بھی فائنل سے باہر ہے.فائنل کھیلنے والی نیوزی لینڈ کے 2پلیئرز جگہ بناسکے جبکہ سری لنکا جس کا کہیں کوئی مقام نہیں رہا،اس کا بھی ایک پلیئر اس بیسٹ الیون کا حصہ ہے.

پاکستان کےبابر اعظم 10میچزمیں 932 اسکور کرسکے تھے،چلیں ان کے آئوٹ ہونے کی وجہ سمجھ میں آگئی کہ ان کے نمبر پر کھیلنے والے دوسرے بیٹسمینوں کا اسکور زیادہ رہا.بھارت کے وکٹ کیپر رشاب پانت کہاں سے اور کیسے سلیکٹ ہوگئے.پاکستان کے محمد رضوان کیوں منتخب نہیں ہوسکے،اس کے لئے کرک سین کا اگلا تجزیہ تھوڑی دیر میں ملاحظہ فرمائیں.