پی سی بی چیئرمین کون،آج ملاقات،2 اہم باتوں کا انکشاف،ڈور ابھی کٹی نہیں،بریکنگ نیوز

0 30

رپورٹ وتجزیہ : عمران عثمانی
پاکستان کرکٹ بورڈ کی قیادت کا ہما کس کے سر سجے گا.ان دنوں یہ موضوع گرم ہے.موجودہ چیئرمین احسان مانی کا 3 سالہ دور اگلے ماہ ختم ہونے کو ہے.اس حوالہ سے ان کے متبادل کے 2 نام سامنے آچکے ہیں.وہ دراصل ایک ہی نام ہے.رمیز حسن راجہ.دوسرا نام خانہ پری کے لئے ہے.کیا واقعی ایسا ہونے جارہا ہے؟کرک سین نے چند ہفتے قبل لکھا تھا کہ احسان مانی ہی اگلے 3 سالہ دور کے مضبوط امیدوار ہیں.ان کو ہی اپنی جاب جاری رکھنےکا کہا جائے گا.ایسا ہوا بھی تھا.اس کی تصدیق تب بھی ہوئی اور اب بھی.سوال یہ ہے کہ آگے کیا ہونے جارہا ہے؟
کرک سین کو کسی بھی ٹرنننگ پوائنٹ کی تصدیق
3دن سے میڈیا میں جاری شور کے بعد کوئی ٹرننگ پوائنٹ ہوسکتا ہے؟کیا کچھ اور ہونے والا ہے؟کوئی تیسرا نام؟یا پہلا فیصلہ.کرک سین نے اس حوالہ سے تحقیقات کیں ہیں تو 2 باتوں کی تصدیق ہوئی ہے.اس کا یقینی ثبوت اگلے چند گھنٹوں میں آجائے گا.پہلی بات یہ ہے کہ احسان مانی خود ہی پیچھے ہٹنا چاہ رہے ہیں.وہ 6 ماہ قبل کےاپنے اولین موقف کی جانب لوٹے ہیں کہ عمر زیادہ ہے.کام کا دبائو ہے.نتائج 100 فیصد نہیں ہیں.گھر جانے کی اجازت درکار ہے.احسان مانی کو وزیر اعظم پاکستان نے اگست 2018 میں تجویز کیا تھا.ستمبر 2018میں ان کا تقرر رائج طریقہ کے تحت ہوا تھا.3 سال کی مدت تھی.اگلے ماہ مکمل ہونے والی ہے.
احسان مانی پیچھے کیوں ہٹ رہے
وزیر اعظم پاکستان عمران خان ہیں.سابق پاکستانی کپتان ہیں.آئین کے مطابق پی سی بی کے پیٹرن انچیف ہیں.حتمی اختیار ان کے پاس ہے.عمران خان نے احسان مانی کو طلب بھی کر رکھا ہے.اسلام آباد میں آج پیر کو ملاقات ہونی ہے.اس میں پی سی بی چیئرمین اپنی رپورٹ بھی دیں گے اور اپنی خواہش ایک بار پھر دہرائیں گے.پی سی بی چیئرمین کو تقرری کے فوری بعد ہی زبردست تنقید کا سامنا کرنا پڑا.بڑے نامی گرامی کرکٹرز نے عمران خان اور احسان مانی کو ہدف بنایا.مانی انگلینڈ سے وسیم خان کو سی ای او کے طور پر لائے.اس پر بھی خوب شور ہوا.مانی اس وجہ سے بھی بیک فٹ پر ہیں.ملکی کرکٹ سسٹم بھی عمران خان کے ویژن کے مطابق 100 فیصد رائج نہیں ہوا.قومی ٹیم کی کارکردگی بھی مایوس کن ہے.کئی محاذ پر انہیں پریشانی یا سبکی کا سامنا ہے.
وزیر اعظم پاکستان کی خواہش
سابق کپتان پاکستان،وزیر اعظم پاکستان عمران خان انہیں دوسرا 3 سالہ دور بھی دینا چاہتے ہیں.عمران خان کو جولوگ جانتے ہیں.وہ بخوبی واقف ہیں کہ بااعتماد افراد سے وہ تسلسل کے ساتھ کام لینا چاہتے ہیں.احسان مانی پر اب بھی انہیں اعتماد ہے.ذرائع کے مطابق ایک بار پھر انہیں پیشکش کی جائے گی.احسان مانی کو ایک خاص وقت تک رکنے کا بھی کہا جاسکتا ہے.ذرائع نے یہ بھی کہا ہے کہ اس کا انحصار رپورٹ پر بھی ہوگا.اگلے پلانز بھی اہم کردار ادا کریں گے.احسان مانی کے بطور چیئرمین تقرر ہونے کے امکانات 50 فییصد سے زائد ہیں.
پلان بی بھی تیار،رمیز راجہ ابھی صرف ذہن میں
دوسری جانب پلان بی بھی تیار ہے.احسان مانی کسی بھی وجہ سے اگلے وقت کے لئے تیار نہ ہوئے یا انہیں نہ روکا گیا تو پھر کیا ہوگا.اسلام آباد سے موصولہ اطلاعات کے مطابق عمران خان کی ٹیبل پر کئی نام موجود ہیں .رمیز راجہ کا نام اس لئے بھی زیادہ لیا جارہا ہے کہ وہ بھی عمران خان کے قریبی ساتھیوں میں ہیں.پڑھے لکھے ہیں.دنیا بھر سے ان کے اچھے روابط ہیں.پی سی بی راہداریوں میں 3 سال گزار چکے ہیں.ان کے حوالہ سے کچھ منفی باتیں بھی ہیں.کئی سابق کرکٹرز ان کے خلاف رائے رکھتے ہیں.ان کے کرکٹ ویژن سے متفق نہیں ہیں.اوسط درجہ کا کرکٹر مانتے ہیں.سطحی مبصر کا درجہ دیتے ہیں.اسی طرح رمیز راجہ کی دونوں رپورٹس پی ایم پاکستان کی ٹیبل پر ہیں.
وسیم اکرم،ماجد خان کے نام بھی کہیں موجود
دیگر ناموں میں وسیم اکرم،ماجد خان بھی شامل ہیں.شعیب اختر نے از خود دلچسپی لی ہے اور پہنچائی ہے.ان کا امکان کم ہے.سوال یہ ہے کہ حتمی امیداور کون ہوگا.رمیز راجہ کی تصدیق دائیں بائیں سے ضرور ہوئی ہے لیکن یہ بھی ضمانت کے ساتھ بتایا گیا ہے کہ فیصلہ ابھی نہیں ہوا.ہم اس کو یوں فرض کرلیتے ہیں کہ عمران خان کے ذہن میں پلان کوئی بھی ہوسکتا ہے.کسی امکانی درجہ میں رمیز راجہ بھی ہونگے.چونکہ ابھی تک ایک نام سامنے آیا ہے،ان کو فیورٹ مانا گیا ہے.
پی سی بی چیئرمین کی تبدیلی سے کیا ہوگا
چیف ایگزیکٹو وسیم خان ہی رہیں گے،ان کو اگلے 3 سال بھی ملیں گے.اس طرح یہ تب ہی یقینی ہوگا،جب احسان مانی ہی رہیں یا پھر مانی جیسے خیالات رکھنے والے آئیں.ان میں رمیز راجہ بھی ہیں.وسیم اکرم بھی شامل ہیں.پی سی بی ہیڈ کوارٹر اس حوالہ سے لاعلمی ظاہر کر رہا ہے.یہ ایک حد تک تو ممکن ہے مگر ایسا بھی نہیں ہے کہ ہائی کمان کو معلوم نہ ہو.رمیز راجہ کی تقرری کے اثرات کافی نیچے تک آئیں گے.دوسری جانب احسان مانی کے ہوتے ہوئے کسی بڑی تبدیلی کی گنجائش نہیں ہے.احسان مانی فروری 2021 تک 100 فیصد تیار تھے.مارچ میں پی ایس ایل 6 کے حوالہ سے کراچی میں جو بد مزگی ہوئی.اس سے ان کو بھی دشواری کا سامنا ہے.
پی سی بی میں اچھے ،برے معاملات
پاکستان کرکٹ کے حالات زیادہ اچھے نہیں ہیں.پی سی بی کی کمزور منیجمنٹ ہے.پی ایس ایل 6 کے لئے پہلے کراچی میں کمزوری دکھائی.کورونا سے ملاپ کروایا.یو اے ای گئے،بے عزتی خوب ہوئی.ڈومیسٹک کرکٹ درست معنوں میں چل نہیں رہی.نتائج ملے نہیں.انٹر نیشنل سطح پر مشکلات ہیں.ہیڈ کوچ مصباح الحق کی تقرری پر سوالات ہیں.کئی سابق کرکٹرزابھی بھی ملازمت کے منتظر ہیں.مالیاتی حساب کلیئرز نہیں ہیں.فرنچائزز سے مسائل ہیں.آئی سی سی پلیٹ فارم پر موثر پاور نہیں ہے.اچھے اقدامات بھی ہیں.70سال سے جاری کرکٹ سسٹم کو 3 سال میں یکسر بدلنا بڑی بات ہے.بڑے بڑے جفادری سائیڈ لائن ہیں.انٹر نیشنل کرکٹ بحال ہے.انگلینڈ اور نیوزی لینڈ اس سا ل آئیں گے.آسٹریلیا نے اگلے سال آنا ہے. میرٹ کے حوالہ سے زیادہ بہتری نہیں.کرکٹ ڈیجیٹل ہے.ڈائریکٹرز کی بھرمار ہے.کورونا کے دور میں اخراجات بھی خوب ہیں.آڈٹ رپورٹ پوشیدہ ہے.
اہم نوٹ
پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین کی سیٹ اہم ہے.عمران خان اپنے پرانے ساتھی احسان مانی کو کام جاری رکھنے کے لئے قائل کریں گے.ممکن ہے کہ کامیاب رہیں.ممکن ہے کہ وہ ملاقات کے بعد خود ہی جانے کی اجازت دے دیں.
اہم ترین خبروں میں سے ایک یہ بھی ہے
زیادہ وقت،کم اسکور،دفاعی کھیل،فواد کی سنچری،اننگ تاخیر سے ڈکلیئر،نتیجہ کیا

Leave A Reply

Your email address will not be published.