پروٹیز منزل کو پہنچ کرپھسل گئے،سری لنکا کامیاب

0 34

رپورٹ: عمران عثمانی

ورلڈ کپ سپر لیگ میں سری لنکا کی پستی سے واپس اٹھان،جنوبی افریقا بھی پستی میں ہے ۔فتح کے قریب آکر ٹیبل میں اپنی پستی روک نہیں سکا۔3میچزکی سیریز کا پہلا میچ سری لنکا نے 14 رنز سے جیت کر نہ صرف برتری لی بلکہ اہم ترین 10 پوائنٹس کے ساتھ جنوبی افریقا کو اپنے سے نیچے دھکیل دیا ہے۔کولمبو میں آئی لینڈرز نے اگر چہ 300 کا بڑا اسکور سجایا لیکن پروٹیز 2 وکٹ پر 200سے اوپر کر کےآخری 5اوورز میں میچ ہارگئے۔۔

میزبان ملک کے اپنے فیصلے

یہ اتنا آسان نہیں ہوتا۔میزبان ٹیم اپنے ملک کی پچ نہ سمجھے۔کنڈیشن سے لاعلم ہو اور سب سے بڑھ کر اپنی طاقت کا اسے پتا نہ ہو۔ایسا کم ہی ہوتا ہے۔اس کے باوجود جمعرات دوپہر کو جب سری لنکا نے جنوبی افریقاکے خلاف ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا اعلان کیا تو تھوڑی حیرت ہوئی۔کولمبو میں 3 ایک روزہ میچزکی سیریزکا پہلا مقابلہ تھا۔جنوبی افریقا ٹیم فیلڈنگ پر آگئی۔

تین سو رنز کا بڑا پھٹہ

آئی لینڈرز ہوم ورک کرچکے تھے۔اننگ کے آغاز کے ساتھ ہی یہ سب سمجھ میں آگیا۔ٹیم کو 12ویں اوور تک57رنزکا اچھا آغاز ملا۔یہاں بھنوکا 27 اورساتھ میں نئے بیٹسمین راجاپاکسا صفر پر گئے تو لگا پروٹیز چھارہے ہیں۔سری لنکا کو کوئی فرق نہ پڑا تھا اس کے بعد اسے 2 اچھی شراکت ملیں۔اوپنر فرنینڈو کے ساتھ پہلے دھننجایا ڈی سلوا نے 44 کئے ۔پھرچیٹھ اسالنکا نے71 رنزبنائے جبکہ اوشکا فرنینڈو 118 کرکے گئے۔سری لنکا نے 50 اوورز میں 9 وکٹ پر 300 اسکور کئے۔یہ ایک بڑا اسکور تھا جو 301 کے ہدف کی شکل اختیار کرگیا تھا۔

پروٹیز پیسرزکو مار،مہاراج ہھر مہاراج

پروٹیز پیسرز انروچ نورتج کو بلا کی مار پڑی۔ریکارڈ تو نہ بنا۔69 رنز دے گئے۔کوئی وکٹ بھی نہ لے سکے۔پھر کیگیسو ردبادا ہی ٹھی ثابت ہوئے،انہیں اگر 65 رنزکی مار پڑی تو وہ 2 وکٹ اپنے کھاتہ میں ڈال گئے۔سب سے زیادہ کامیاب اسپنر کیشو مہاراج تھے۔جن کے 10اوورز میں سری لنکن محض 30ہی اسکور بناسکے۔انہوں نے 2 وکٹیں لیں۔ایڈن مارکرم اور تبریز شمسی نے بھی ایک ایک آئوٹ کیا۔

جوابی اننگ میں میں جنوبی افریقا کا اچھا آغاز

یاد رکھیں۔یہ ورلڈ کپ سپر لیگ کی اہم سیریز ہے۔سری لنکا کے لئے تو بہت ہی اہم۔اس کے بیٹسمینوں نے کم سے کم یہ ثابت کیا جو بڑا ہدف سیٹ کیا۔ٹیم مطمئن تھی۔یہ کیا ،ادھر پروٹیز بھی کسی مشکل میں نہ لگے۔49رنزکا اچھا آغاز لیا۔جان مین میلان آئوٹ ہونے والے پہلے بیٹسمین تھے جو 23کرگئے،اس کے بعد ایڈن مارکرم نے مار کٹائی شروع کردی اور کپتان باووما کے ساتھ مل کر اسکور155تک پہنچادیا۔ہر چیز ٹھیک جارہی تھی کہ انجری کی وجہ سے پپروٹیز قائد باووما کو38پر ریٹائرڈ ہرٹ ہونا پڑا۔خیر سے ڈیئر ڈوسین آگئے۔یہ الگ بات ہے کہ سری لنکا نے 166کے مجموعہ پر مارکرم کی بڑی وکٹ اڑادی جو نروس نائینٹیز کاشکار ہوئے۔90 بالز پر 96کی اننگ کھیلنے والے مارکرم جے وکراماکاشکار بنے۔اس کے باوجود جنوبی افریقا 31ویں اوور میں 209 تک آگیا تھا۔2 ہی آئوٹ تھے۔

بدحواس لنکن کی شاندار واپسی

سری لنکن کیمپ بد حواسی کا شکار تھا کیونکہ67بالوں پر پروٹیز کو صرف 92رنز بنانے تھے۔8 وکٹیں ہاتھوں میں تھیں کہ یہاں تیسری وکٹ گر گئی۔سری لنکن واپسی کر رہے تھے۔ویرئین 20بالز پر 12 کرسکے۔فتح جب 41رنزکی دوری پر تھی تو ڈیئر ڈوسین 59 رنزبناکر چلے گئے،انہوں نے اتنی ہی بالیں کھیلیں ۔اب ہدف مشکل ہورہا تھا۔بالیں کم تھیں۔ہنریک کلاسین اور فلکوایو نے اگلے 2 اوورز بہت غلط کھیلے اور 13 بالز پر 9 رنز ہی بناسکے۔48اوورز میں اسکور 269 تھا۔12بالز پر 32 اسکور مشکل تر تھے۔

آخری 12بالز پر مشکل 32 رنز

جنوبی افریقا کو اب آخری 12 بالز پر جیت کے لئے 32 رنزبنانے تھے۔یہ مشکل ترین تھے۔دبائو بڑھا تو حالات نے پلٹا کھالیا۔فلکوایو 5کر کے بولڈ ہوگئے۔آخری اوور میں 5 چھکے کیسے لگ سکتے تھے۔نتیجہ میں پروٹیز اننگ 6 وکٹ پر 286 رنزکے ساتھ سمٹ گئی۔آئی لینڈرز 14 رنز سے کامیاب ہوگئے۔سری لنکا کی جانب سےاکیلا دھنن جایا نے 65رنز دے کر 2 کھلاڑی آئوٹ کئے۔باقی بائولرز ایک ایک وکٹ لے سکے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.