Img 20201115 160022 1

ملتان یا لاہور،فیصلہ آج،قومی ہیروز کا سلطانز سے نیا تعصب؟

عمران عثمانی

پاکستان سپر لیگ کا اہم ترین میچ اتوار کی شام کھیلا جارہا ہے. لیگ پوائنٹس ٹیبل کی سر فہرست ٹیم ملتان کو ڈو آر ڈائی کا سامنا ہے. پہلے کوالیفائر میں شکست کے بعد ٹیم دبائو میں ہے. رہی سہی کسر نامور مبصرین اور تجزیہ نگاروں نے نکال دی ہے جس سے ٹیم کا مورال بھی ڈائون ہوا ہے اور جنوبی پنجاب کرکٹ شائقین کو شدید مایوسی ہوئی ہے.
سابق کپتان رمیز راجہ اور سابق فاسٹ بائولر شعیب اختر نے کھلے عام لاہور قلندر ز کی حمایت کرکے اپنے منصب اور قد کاٹھ سے انصاف نہیں کیا ہے. یہ الفاظ میرے نہیں، کرک سین دیکھنے والے کرکٹ شائقین کے ہیں. آگے بڑھنے سے قبل کرک سین پر پیش کی گئی ان رپورٹ کا اجمالی خاکہ ملاحظہ فرمائیں.
رمیز راجہ نے پی ایس ایل فائنل کی حتمی ٹیمیں بتادیں،ملتان کے بارے میں نئی بات
شعیب اختر نے مسلسل 2 دن اپنی خواہش ظاہر کی کہ فائنل کراچی اور لاہور کا ہو. انہوں نے کہا کہ میں لاہور کی گلیوں میں یہ باتیں سننا اور دیکھنا چاہتا ہوں کہ فائنل کراچی اور لاہور کا ہو.
اسی طرح رمیز راجہ نے کہا کہ لاہور قلندرز کا فائنل کلاسک ہوگا.
راولپنڈی ایکسپریس کی دونوں ٹیمیں فاتح،اگلی فائنلسٹ بھی بتادی
پی ایس ایل میں آج ملتان سلطانز اور لاہور کا میچ ہوگا. دونوں کبھی فائنل نہیں کھیلے. دونوں کبھی اس اسٹیج تک نہیں پہنچے تھے .
دونوں ٹیمیں 6 میچ میں آمنے سامنے آئیں. مقابلہ 3-3سے برابر ہے.
ملتان سلطانز کے حوالے سے کسی بھی قسم کی پیش گوئی کرنے کا کسی کو بھی حق ہے لیکن اپنی خواہشات کا اس طرح کھلے عام اظہار یا اپنے تبصروں کا ایسا انداز اختیار کرنا جس سے کسی ایک کی طرف جھکا ئوکا تاثر ملے.کسی حد تک تعصب کو تو جنم نہیں دیتا؟
رمیز راجہ،شعیب اختر وغیرہ کے تبصروں سے جانبیت کی بو آئی ہے.
خاص کر شعیب جنہوں نے ایک موقع پر یہاں تک کہا کہ لاہور کا فائنل ہونا چاہیئے. پھر انہیں شاید احساس ہوا تو فوری بولے کہ جنوبی پنجاب بھی ہمارا ہے.
اگر جنوبی پنجاب بھی آپ کا ہے تو کم سے کم ایسے جملے تو مت بولیں.
آپ پیش گوئی کرسکتے ہیں مگر خواہش کا اظہار اس انداز میں نہیں کہ
جس سے پاکستان کے ایک بڑے حصے کی دل آزاری ہو، جس سے کچھ نیا تاثر ملے.

اپنا تبصرہ بھیجیں